وزیراعظم عمران خان نے نیول ہیڈکوارٹرز اسلام آباد کا دورہ کیا۔ نیول ہیڈکوارٹرز آمد پر امیرالبحر ایڈمرل محمد امجد خان نیازی نے وزیراعظم کا استقبال کیا اورپاک بحریہ کے چاق وچوبند دستے نے انہیں گارڈ آف آنرپیش کیا۔ معزز مہمان نے یادگار شہداء پر پھولوں کی چادر چڑھائی اور نیول ہیڈکوارٹرز کے پرنسپل اسٹاف آفیسرز سے ان کا تعارف کرایا گیا۔

وزیراعظم نے پاک بحریہ کی آپریشنل تیاری اور پیشہ وارانہ مہارت کو سراہا اور ملکی سمندری حدود کے دفاع میں پاک بحریہ کی صلاحیت و قابلیت پر اطمینان کا اظہار کیا۔ انہوں نے خطے کے سمندری تحفظ کے لیے بین الاقوامی کاوشوں میں اشتراک اور اس ضمن میں پاک بحریہ کے اقدامات کی تعریف کی۔ وزیراعظم نے پاکستان کی ساحلی حدود، گوادر پورٹ اور سی پیک کے میری ٹائم منصوبوں کی سیکیورٹی کے لیے کیے جانے والے اقدامات پر بھی مکمل اعتماد کا اظہار کیا۔

وزیراعظم نے پاک بحریہ کوخطے میں ابھرتے ہوئے چیلنجر سے نبردآزما ہونے کی صلاحیت کی توسیع و ترقی کے لیے مکمل حکومتی حمایت کا یقین دلایا۔ انھوں نے مزید کہا کہ حکومت میری ٹائم سیکٹر کی اہمیت اور ملکی و معاشی ترقی میں اس کے کردار سے بہ خوبی واقف ہے۔ اسی جذبے اور حکومتی وژن کے تحت سال 2020 کو بلیو اکانومی کا سال قرار دیا گیا تاکہ میری ٹائم سیکٹر کی ترقی کی لیے ایک جامع حکمت عملی تیار کی جا سکے۔

قبل ازیں، وزیراعظم اور ان کے ہمراہ وزراء جن میں وفاقی وزیر برائے دفاع،وفاقی وزیر خزانہ، وفاقی وزیر برائے بحری امور، وزیر اعظم کے خصوصی مشیر برائے نیشنل سیکیورٹی ڈوژن اور اسٹرٹیجک پالیسی پلاننگ اور سیکریٹریز برائے دفاع،خزانہ، خارجہ اور بحری امور شامل تھے کو میری ٹائم سیکیورٹی چیلنجر اور میری ٹائم سیکٹر کی ترقی کے لیے پاک بحریہ کے اقدامات پر تفصیلی بریفنگ دی گئی۔

امیرالبحر نے وزیراعظم کا نیول ہیڈکوارٹرز آمد اور پاک بحریہ پر اعتماد کاشکریہ ادا کیا۔سرا براہ پاک بحریہ نے انہیں یقین دلایا کہ پاک بحریہ اللہ سبحان و تعالیٰ کی مدد سے ملک و قوم کی خدمت اور ہر طرح کے حالات خواہ امن ہو یا جنگ سمندری حدود کے دفاع اورملکی مفاد کے تحفظ کی اہم ذمہ داری سرانجام دینے کے لئے ہمہ وقت تیار ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں